110

مٹھی(نامہ نگار) محکمہ صحت تھرپارکر کے 49 ملازمیں کو 2017 سے تنخواہیں نہ مل سکیں ملازمیں کا پریس کلب مٹھی کے سامنے اکیسویں دن بھی احتجاج، احتجاج پر ینگ پیرامیڈیکل کے صوبائی عہدیداران نے پہنچ کر اظہار یکجھتی کی تفصیلات کے مطابق محکمہ صحت تھرپارکر کے مختلف اسپتالوں اور ڈسپنسریوں میں

مٹھی(نامہ نگار) محکمہ صحت تھرپارکر کے 49 ملازمیں کو 2017 سے تنخواہیں نہ مل سکیں ملازمیں کا پریس کلب مٹھی کے سامنے اکیسویں دن بھی احتجاج، احتجاج پر ینگ پیرامیڈیکل کے صوبائی عہدیداران نے پہنچ کر اظہار یکجھتی کی تفصیلات کے مطابق محکمہ صحت تھرپارکر کے مختلف اسپتالوں اور ڈسپنسریوں میں کام کرنے والے 49 ملازمیں کو 2017 سے تنخواہیں نہ مل سکیں ہے ملازمیں نے تنخواہیں نہ ملنے کے خلاف ایکیسویں دن بھی پریس کلب مٹھی کے سامنے احتجاج جاری رکھا ملازمیں کی احتجاجی کیمپ پر ینگ پیرامیڈیکل ایسوسیئشن سندھ کے عہدیداران مرکزی چیئرپرسن فائزہ خان جبار کمبھار اور دیگریں نے پہنچ کر اظہار یکجھتی کی اور ملازمیں کے حقوق کے لیئے نعریبازی کی اس موقعے پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ محکمہ صحت کے ملازمیں فرنٹ لائن سپاہی ہیں جو ہر مشکلات میں اپنی ڈیوٹی سرانجام دیتے کیں مگر حکومت کا ان سے رویہ بھتر نہیں ہے تھر کے ملازمیں 2017 سے تنخواہوں سے محروم ہیں ڈیوٹی کرتے ہیں مگر ان کو حق نہیں دیا جا رہا ہے ملازم سراپا احتجاج ہیں مگر ان کی کوئی سننے والا نہیں ہے یہاں پر وزیر مشیر آ کر بڑے دعوائے تو کرتے ہیں مگر ملازموں کی پریشان پر کوئی بولنے والا نہیں ہے ملازمیں کے حق میں ھاء کورٹ نے بھی حکم دیا مگر ان پر بھی عمل نہیں کیا گیا ہے انہوں نے کہا اگر ملازمیں کے مسئلے کو فوری طور پر حل نہیں کیا گیا تو پوری سندھ میں احتجاجی تحریک چلائی جائے گے اور سی ایم ہائوس کے سامنے دھرنا بھی دیا جائے گا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں