63

ڈیرہ غازی خان ( )آر پی او فیصل رانا کی زیرصدارت ریجن کے چاروں اضلاع کی کرائم میٹنگ

ڈیرہ غازی خان ( )آر پی او فیصل رانا کی زیرصدارت ریجن کے چاروں اضلاع کی کرائم میٹنگ،چاروں اضلاع کے ڈی پی اوز اور17ڈی ایس پیز سمیت پولیس افسران کی شرکت،ڈکیتی گینگز،سماج دشمن قانون شکن عناصر اور اشتہاری ملزمان کے خلاف چاروں اضلاع میں بیک وقت حسب ضابطہ آپریشن شروع کرنے کے احکامات جاری،سنگین واردات کے جائے وقوعہ پر ایس ایچ او اور ایس ڈی پی اوکے پہنچنے کو لازمی قرار دے دیا گیا،مقدمات کی تفتیش مدعی یا ملزم پارٹی کی مرضی پر نہیں بلکہ قانون کی مرضی پر ہو گی ۔آر پی او نے کہا کہ قابل دست اندازی جرم ہونے کی صورت میں ایف آئی آر کا اندارج نہ ہونا پولیس کی طرف سے انصاف کے راستے میں پہلی رکاوٹ ہے جسے کسی صورت برداشت نہیں کیا جائے گا،وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کے ویژن اور آئی جی پنجاب انعام غنی کی ہدایات کی روشنی میں ہم نے ریجن کے چاروں اضلاع کی قانون پسند عوام کو تحفظ بھی فراہم کرنا ہے اور انہیں قانون شکنوں کے خلاف پولیس فورس کا پشتی بان بھی بناناہے یہ اسی طرح ممکن ہے کہ ایک تو قانون پسندوں اور قانون شکنوں میں واضح تفریق ہو،قانون پسند عوام کی طرف سے دی جانے والی درخواستوں پر قانون کے مطابق فوری کارروائی کی جائے قابل دست اندازی جرم کی صورت میں ایف آئی آر کے اندراج کے راستے میں کوئی رکاوٹ برداشت نہیں کی جایگی- فیصل رانا نے کہا کہ ہوائی فائرنگ قانون شکنی کا ایسا آغاز ہے جس سے قتل و غارت گری جنم لیتی ہے کسی بھی تقریب میں ہوائی فائرنگ کو قطعی برداشت نہیں کیا جائے گا،اس سلسلہ میں کسی کی بھی کوئی سفارش قابل قبول نہیں،شادیوں میں ہوائی فائرنگ کو روکنا ایس ایچ اوز کی ذمہ داری ہے۔آر پی او نے کہا کہ پرانی دشمنی کے مقدمات کی سماعت کے دوران عدالتوں کی سیکورٹی کو فول پروف بنایا جائے،احاطہ عدالت میں کسی قسم کی فائرنگ نا قابل برداشت ہو گی،انہوں نے کہا کہ ڈکیتی اور رہزنی کے مقدمات میں ملزمان کی شناخت پریڈ ضرور کروائی جائے کیوں کہ شناخت پریڈ سے ایسے شواہد موثر آتے ہیں جس سے معزز عدالتیں قانون کے مطابق ملزمان کو عبرتناک سزا دیتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں