199

گڑھ مہاراجہ کی اہم شخصیات کے بارے جو سلسلہ تحریر شروع کیا گیا ہے آج ذکر ہو گا ملک حیدر علی اعوان صا حب کا جو گڑھ مہاراجہ میں صاحبزادہ گروپ کی اھم ترین شخصیت ھیں ۔_______________

گڑھ مہاراجہ کی اہم شخصیات کے بارے جو سلسلہ تحریر شروع کیا گیا ہے آج ذکر ہو گا ملک حیدر علی اعوان صا حب کا جو گڑھ مہاراجہ میں صاحبزادہ گروپ کی اھم ترین شخصیت ھیں ۔_______________
ملک حیدر علی ولد ملک سراج دین اعوان کا خاندان ہندستان سے 1947ء میں ھجرت کر کے گڑھ مہاراجہ میں آکر آباد ہوا دیگر مہاجرین کی طر ح ملک سراج دیں اعوان نے بھی گزر اوقات کے لیئے کافی محنت کی اور ڈرایئوری پیشہ اختیار کیا ۔ عون عباس خان کے دادا خان نوازش علیخان سیال کے ھاں بطور ڈرایئور ملازمت اختیار کی ان کی وفات کے بعد کافی عرصہ عون عباس خان کے والد خان مظفر علی خان سیال کے ھاں بھی بطور ڈرایئور ملازم رھے ملک سراجدین اپنی اعوان برادری میں کافی اثر رسوخ رکھتے ان کے عزیز و اقارب ہمیشہ خان نوازش علی خان کے ووٹر ھی رھے بعد میں مظفر خان کے بھی وفادار رھے لیکن ملک سراج کی وفات اور مظفر علی خان کی وفات کے بعد یہ سلسلہ وفا و محبت ذیادہ عرصہ قائم نہ رہ سکا کیونکہ عون عباس خان اپنے دور اقتدار میں اعوان برادری کے اندرونی دھڑوں میں توازن قائم نہ رکھ سکے عرصہ دراز سے خان صاحبان سیاسی طور پر ایک ھی خاندان جس کی قیادت ملک قمبر اعوان صاحب کرتے تھے کو ھی نوازتے رھے تھے۔ خان صاحبان کی مہربانی سے ملک قمبر اعوان متعدد بار کونسلر بنے نا ئب نا ظم بھی بنے اپنے دور اقتدار میں اپنے ھی خاندان کو نوازتے ربے جس وجہ سے اعوان برادری میں ملک قمبر کے خلاف کافی نفرت پیدا ھوئی اس نفرت کے نتیجہ میں عون عباس خان سے اعوان برادری کے ایک دھڑے نے ملک قمبر کے خلاف لوکل الیکشن میں حمائت کا تقاضا کر دیا لیکن خان عون عباس خان نے ملک قمبر کی حمائت الیکشن میں جاری رکھی اس کے لیئے ڈور ٹو ڈور لوگوں سے ووٹ بھی مانگے اس کے با وجود ملک قمبر صاحب اعوان برادری کے ایک نوجوان ملک معظم اعوان سے کونسلر کا الیکشن ھار گئے ملک معظم اعوان کی ساری سیاسی پشت پناہی در اصل ملک حیدر علی اعوان صاحب ھی کر رھے تھے ملک حیدر علی ملک معظم کا الیکشن جیت کر بھی عون عباس خان کے ڈیرے پر جلوس کی شکل میں گئےاور سیال گروپ کی وفاداری کا اظہار کیا اور مطالبہ یہ کر دیا کہ اعوان برادری میں ھمارا گروپ ذیادہ ووٹ کا حامل ھے برادری ھمارے ساتھ ذیادہ ھے لہذا ملک قمبر اعوان اب اعوان برادری کا نمائندہ نہ رھا ھے ڈیرہ پر اس کی جگہ ھمیں دی جائے جو کہ خان صاحبان نے نہ مانا بلکہ ملک قمبر کے بیٹے کو سپیشل سیٹ پر نامزد کر دیا اس پر ذیادہ خان صاحبان سے ملک حیدرکے اختلاف پیدا ھو گئے کیونکہ وہ اپنے بھانجے ملک مبارک علی اعوان مرحوم کے بیٹے کو سپیشل سیٹ پر الیکشن لڑانا چاھئتے تھے جس کی حمائیت کرنے کے لئے خان صاحبان تیار نہ تھے اس وجہ سے ملک حیدر علی اعوان صاحب سیال گروپ کو چھوڑ کر صاحبزادہ گروپ کے ھو گئے قومی الیکشن میں بڑے مضبوط ارادوں سے ثابت قدمی اور دلیری سے عون عباس خان اور سیال گروپ کئ مخالفت کی جس کا سیال گروپ کو کا فی نقصان ھوا ملک صاحب آج تک صاحبزادہ گروپ کے ساتھ ہیں خصو صا”موجودہ ایم پی اے رانا شہباز احمد خان کے کرتا دھرتا ھیں ملک صاحب اچھے سیاسی ورکر ھیں تعمیری سوچ کے حامل ھیں گڑھ مہاراجہ امن کمیٹی کے ممبر ہیں سیاست میں فرقہ واریت پر یقین نہ رکھتے ہیں لبرل سیاست کے قائل ہیں عون عباس اور سیال گروپ کے خلاف اپنے مخصوص انداز میں طنز و تنقید کرتے ہیں اپنے گروپ کے لیئے ہر وقت عوام کو خاص کر نوجوان نسل کو تیار کرنے میں لگے رہتے ہیں غریب عوام کے کام بھی آتے ہیں گڑھ مہاراجہ کی تعمیر وترقی کے لئے ہر وقت کو شاں ہیں ۔
کہنے کو لوگ جو مرضی کہیں اعوان برادری میں ملک قمبر اعوان کی سیاست کا خاتمہ ملک حیدر ہی کی وجہ سے ہوا ہے اور اعوان برادری پر سیال خاندان کی مضبوط گرفت کا خاتمہ ملک حیدر اعوان ھی کی وجہ سے ہوا ھے۔
لوگ کہتے ہیں ملک حیدر علی اعوان کی لگائی ہوئی سیاسی ضر
ب ملک قمبر اعوان اور اس کے خاندان کوسیاسی میدان میں کبھی سنبھلنے نہیں دے گی۔
شکریہ
سلطان نیوز

آئیندہ تحریر ھو گی مہر فخر عباس ڈب کے بارے جو صاحبزادہ گروپ کے ڈب قوم میں قابل اعتماد نمائیندہ ھیں۔
ضرور پڑھئےگا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں