97

*پلازمہ کیا ہے. ؟* یحییٰ جعفری نامی نوجوان کا پلازمہ عطیہ کرنا کس حد تک اہمیت کا حامل ہے؟ ‏ خون کے چار بنیادی حصے ہوتے ہیں یعنی سُرخ خلیے،‏ سفید خلیے،‏ پلیٹ‌لیٹس اور پلازمہ۔‏ اِن بنیادی حصوں سے خون

*پلازمہ کیا ہے. ؟*
یحییٰ جعفری نامی نوجوان کا پلازمہ عطیہ کرنا کس حد تک اہمیت کا حامل ہے؟

‏ خون کے چار بنیادی حصے ہوتے ہیں یعنی سُرخ خلیے،‏ سفید خلیے،‏ پلیٹ‌لیٹس اور پلازمہ۔‏ اِن بنیادی حصوں سے خون کے اجزا حاصل کئے جاتے ہیں۔‏ مثال کے طور پر سُرخ خلیوں میں ہیموگلوبِن نامی پروٹین پایا جاتا ہے۔‏ انسانوں اور جانوروں سے لئے گئے ہیموگلوبِن سے مختلف دوائیاں بنائی جاتی ہیں۔‏ یہ دوائیاں اُن مریضوں کو دی جاتی ہیں جن میں خون کے سُرخ خلیوں کی کمی (‏انیمیا)‏ پائی جاتی ہے یا پھر جن کا خون بڑی مقدار میں بہہ چکا ہوتا ہے۔‏

پلازمہ کا ۹۰ فیصد حصہ پانی پر مشتمل ہے۔‏ پلازمہ میں مختلف قسم کے ہارمون،‏ نمکیات،‏ انزائم،‏ غذائیں،‏ معدنیات اور شکر بھی پائے جاتے ہیں۔‏ پلازمہ میں البومین جیسے پروٹین کے علاوہ ایسے اجزا بھی شامل ہیں جو خون کو جمانے کا کام انجام دیتے ہیں اور بیماریاں پیدا کرنے والے جراثیم کو تباہ کرتے ہیں۔‏ جب ایک شخص کو چھوت کی بیماری لگنے کا خطرہ ہوتا ہے تو ڈاکٹر اُسے اکثر گاما گلوبولن کا ٹیکہ لگاتا ہے۔‏ یہ دوائی ایسے انسانوں کے پلازمہ سے بنائی جاتی ہے جن کے خون میں اِس بیماری کو ختم کرنے والے اجزا موجود ہیں۔‏ سفید خلیوں سے ایسے پروٹین (‏انٹرفیرون اور انٹرلوکنِ)‏ حاصل ہوتے ہیں جن سے چھوت کی مختلف بیماریوں اور کینسر کا علاج کِیا جاتا ہے۔‏

واضح رہے کہ حال ہی میں امریکہ میں مستند اداروں نے ڈاکٹروں کو کووِڈ۔19 کے ایسے شدید بیمار یا جان لیوا صورتحال کا سامنا کرنے والے افراد کے علاج کے لیے ایک ایسی تحقیقاتی نئی دوا تک رسائی کی اجازت دی ہے جو بنیادی طور پر کورونا ہی کے صحت یاب ہونے والے مریضوں کے خون سے حاصل کردہ پلازمہ یا سیال ہے۔

اسے خون کا روبصحت سیال یا کونویلیسینٹ پلازمہ کہا جاتا ہے۔ کورونا سے ہونے والی معتدی بیماری کووِڈ۔19 کی صورت میں معروف امریکی ادارے ایف ڈی اے نے اسے کووِڈ۔19 کونویلیسینٹ پلازمہ کا نام دیا ہے

ادھر روس نے بھی کورونا وائرس سےصحتیاب ہونے والوں کے خون سے پلازمہ لےکر دوا کی تیاری شروع کردی۔روسی سائنسدان کا کہنا ہے کہ علاج کے لیےکورونا وائرس سےصحتیاب افراد کے خون کے 500 ملی لیٹر پلازمہ کی ضرورت ہوگی کیونکہ دوا صحتیاب افراد کےخون کے پلازمہ سے اینٹی وائرل امیونوگلوبلین حاصل کرکے تیارکی جائے گی۔روسی سائنسدان نے بتایا کہ دوا کی تیاری کے لیے سائنسدانوں کو 76 ہزار ڈالر سے زائدکی خطیر رقم درکار ہوگی اور اس کی تیاری میں 30 دن لگیں گے۔

چین میں بھی نوول کورونا وائرس کے مریضوں کے علاج کے لئے کونوالیزینٹ پلازمہ تیار کر لیا گیا ہے۔چین کے قومی بائیوٹک گروپ کے مطابق یہ کونوالیزینٹ پلازمہ تھراپی نوول کورونا (COVID-19)سے متاثرہ مریضوں کی شفا یابی کے لئے استعمال کیا جائے گا۔کمپنی نے کہا کہ انہوں نے کچھ شفا یاب مریضوں سے پلازمہ اکٹھا کیا ہے تاکہ کونوالیزینٹ پلازمہ اور ایمیون گلوبو لین سمیت تھرا پیٹک مصنوعات تیار کی جا سکیں۔خون کے بائیوسیفٹی ٹیسٹ، وائرس کے غیرموثر ہونے اور اینٹی وائرس سرگرمی کے ٹیسٹ لئے جانے کے بعد انہوں نے کامیابی کے ساتھ طبی علاج کے لئے کونوالیزینٹ پلازمہ تیار کیا ہے اور شدید بیمار مریضوں کے علاج کے لئے اس کا استعال کیا گیا ہے۔واضح رہے کہ فروری کے مہینے سے ہی چین میں پلازمہ کے طریقہ علاج پر کامیاب تجربات کرلیئے گئے ہیں۔

پاکستان میں خون کے امراض کے ماہر ڈاکٹر طاہر شمسی کے مطابق سندھ حکومت نے پلازمہ ٹیکنیک سے علاج کی منظوری دے دی ہے۔
اس حوالے سے سندھ میں بھی کراچی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر طاہر شمسی کے مطابق اب مریضوں کا علاج پلازمہ ٹیکنیک کی مدد سے ہوگا۔

خون کے امراض کے ماہر ڈاکٹر طاہر شمسی کے مطابق سندھ حکومت نے پلازمہ ٹیکنیک سے علاج کی منظوری دے دی ہے۔
اس طریقہ علاج میں کورونا مریضوں کو آئی سی یو یا وینٹی لیٹر کی ضرورت نہیں پڑے گی، بلکہ ان افراد کی مدد لی جائے گی جو پہلے کورونا کو شکست دے چکے ہوں گے۔
علاج کیلئے صحت یاب افراد کے خون سے پلازمہ لیا جائے گا اور جس سے متاثرہ افراد کا علاج ممکن ہوگا، اس سلسلے میں سندھ حکومت کے ساتھ مل کر اسی ہفتے لائحہ عمل تیار کرلیا جائے گا۔

ڈاکٹر طاہر شمسی کے مطابق صحت یاب مریض ہر ایک ہفتے بعد پلازمہ عطیہ کرسکیں گے۔

حالیہ دنوں یحییٰ جعفری نامی نوجوان جنہوں نے اپنا پلازمہ کورونا سے لڑنے میں مدد کیلئے عطیہ کیا ہے جو کہ اخوش آئند اور انسانیت و حبّ الوطنی کے جزبے سے سرشار ایک انتہائی مثبت قدم ہے۔ امید ہے کہ یحییٰ جعفری کے اس عمل سے متاثر ہوکر قوم کے بہت سے کورونائی مریض نوجوان جو انشاءاللہ اس وبا سے شفاء پائینگے جلد ہی یحییٰ جعفری کے نقشِ قدم پر چلتے ہوئے مزید پلازمہ عطیہ کرینگے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں